روڈ سیفٹی علماء کانفرنس

* نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس کے زیر انتظام روڈ سیفٹی کے حوالے سے علماء کانفرنس کا انعقاد۔
* ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے موت واقع ہوجائے تو وہ خود کشی کے مترادف ہے۔
* پاکستان آرمی کو دنیا کی بہترین آرمی جبکہ موٹروے پولیس کو دنیا کی بہترین پولیس کا اعزاز حاصل ہے۔
* دوران ڈرائیونگ قوانین کی خلاف ورزی کی صورت میں چالان انسان کی جان بچانے کا پروانہ ہوتا ہے۔
* موٹروے پولیس کا ٹریفک قوانین پر عمل کے حوالے سے علماء کانفرنس کا انعقاد قابل تعریف ہے۔
(علماء کرام کا نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس کے زیر انتظام روڈ سیفٹی کے حوالے منعقد علماء کانفرنس سے خطاب)
ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے موت واقع ہوجائے تو وہ خود کشی کے مترادف ہے ۔ علماء کرام کو روڈ سیفٹی اور ٹریفک قوانین کے شعور کو اجاگر کرنے میں موٹروے پولیس کے ساتھ بھر پور تعاون کرنا چاہیے۔پاکستان آرمی کو دنیا کی بہترین آرمی جبکہ نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس دنیا کی بہترین پولیس کا اعزاز حاصل ہے۔انسپکٹر جنرل ڈاکٹر سید کلیم امام نے ثابت کر کے دکھایا کہ موٹروے پویس میں ایک نقطے کے برابر بھی کرپشن نہیں ہے۔ ان خیالات کا اظہار پیر عتیق الرحمن نے نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس کے زیر انتظام ڈرائیونگ لائسنسنگ اتھارٹی اسلام آباد کے حامد شہید شکیل آڈٹیوریم میں روڈ سیفٹی کے حوالے منعقد علماء کانفرنس میں شریک شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ جس کے مہمان خصوصی انسپکٹر جنرل نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے  پولیس ڈاکٹر سید کلیم امام تھے۔

Ulema conference-pic-1

علماء کانفرنس میں پیر اظہار بخاری،علامہ عارف واحدی،حافظ اقبال رضوی ،پیر عتیق الرحمن شاہ ، علماء کرام کی کثیر تعداد ، ڈی آئی جی (آپریشنز) عباس احسن، اے آئی جی فضل حامد، ایس ایس پی ہیڈ کواٹرز عدیل شہزاد، سی پی او ڈرائیونگ لائسنسنگ اتھارٹی انعام الٰہی ، موٹروے پولیس کے دیگر سینئر افسران و ملازمان کے علاوہ مختلف طبقہ فکر سے تعلق رکھنے افراد کی ایک کثیر تعداد نے شرکت کی ۔ اس موقع پر شہداء کی درجات کی بلندی کیلئے خصوصی دعا بھی کی گئی۔اسلامی نظریاتی کونسل کے رکن علامہ عارف واحدی نے علماء کانفرنس میں شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس نے ٹریفک قوانین ، ملکی قوانین اور روڈ سیفٹی پر عمل درآمد کے سلسلے میں مشاورت کے لئے علماء کانفرنس کا انعقاد کیا ہے وہ قابل تعریف ہے۔ ملکی قوانین پر عمل کرنا ہم سب پر فرض ہے۔ ملکی قوانین پر عمل کرنا عبادات کے مترادف ہے جبکہ ملکی قوانین پر عمل نہ کرنا حرام ہے ۔ خدمت انسانیت سب سے بڑی عبادت ہے ،انہوں نے کہا کہ ہر طبقہ فکر موٹروے پولیس کی کاکر دگی سے مطمئن ہے ۔حافظ محمد اقبال رضوی نے کہا کہ روڈ سیفٹی کے حوالے سے علماء کانفرنس کا انعقاد کرکے نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس نے علماء کرام کی کندھے پربہت بڑی ذمہ داری عائد کی ہے اب یہ علماء کرام کی ذمہ داری ہے کہ عوام میں روڈ سیفٹی اور ٹریفک قوانین کے آگاہی کے سلسلے میں موٹروے پولیس کے شانہ بشانہ کام کریں اور مذہبی اجتماعات اور جمعہ کے خطبات میں ٹریفک قوانین اور روڈ سیفٹی کے حوالے سے تعلیمات دیں۔

Ulema conference-pic-2

اس مو قع پر شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے پیر سید اظہار بخاری نے کہا کہ پاکستان کو اتحاد کی ضرورت ہے، ٹریفک قوانین اور روڈ سیفٹی پر عمل درآمد کے حوالے سے انسپکٹر جنرل ،نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس ڈاکٹر سید کلیم امام نے علماء کانفرنس کا انعقاد کر کے جو قدم اٹھایاہے وہ قابل تحسین ہے۔ نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس کے افسران ملکی شاہراؤں پر قانون کی حکمرانی قائم کرنے اور زندگیاں بچانے میں مصروف عمل ہے ۔ شاہراؤں پر دوران ڈرائیونگ قوانین کی خلاف ورزی کی صورت میں چالان انسان کی جان بچانے کا پروانہ ہوتا ہے تاکہ وہ دوبارہ کوئی ایسی غلطی نہ جس کی وجہ سے ٹریفک حادثہ رورونماہونے کا اندیشہ ہو، ٹریفک قوانین انسانی زندگی بچانے کے لئے ہیں۔ شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے انسپکٹر جنرل نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس ڈاکٹر سید کلیم امام نے کہا کہ آج مبارک دن ہے کہ موٹروے پولیس نے علماء کرام کو دعوت دی تاکہ علماء کرام کے ذریعے ٹریفک قوانین کی آگاہی کو پھیلایا جا سکے کیونکہ معاشرے میں جتنی بات علماء کرام کی مانی جاتی ہے اور کسی کی نہیں مانی جاتی ۔ ہم اپنی جان کی حفاظت کے پابند ہیں وہاں دوسروں کی زندگی کی حفاظت بھی ہم پر فرض ہے۔حادثات میں قیمتی جان ومال کے ضیاع کو روکنے کیلئے نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس علماء اور مشائخ سے توقع کرتی ہے کہ قیمتی جان و مال کی حفاظت کے لئے دینی تعلیمات کے ساتھ ساتھ ٹریفک قوانین کو بھی اپنے خطبات کا حصہ بنائیں تاکہ قیمتی جان و مال کے ضیا ع کو بچایا جا سکے۔ یہ حقیقت ہم سب جانتے ہیں کہ کسی قوم کا نظم وضبط اس کی شاہراؤں پر دیکھا جا سکتا ہے۔نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس نے روڈ سیفٹی ایجوکیشن مہم کو بہترین حکمت عملی کے تحت نہ صرف شاہراؤں تک پھیلایا بلکہ تعلیمی اداروں ، بس /ٹرک اڈوں ، سرکار ی نیم سرکاری دفاتر ، دینی مدارس میں روڈ سیفٹی سیمینارز ، ورکشاپس، اور واکس کے انعقاد کے ساتھ ساتھ نصابی اور غیر نصابی سر گرمیوں منعقد کراؤئیں،جن کی بدولت حادثات کی شرح میں خاطر خواہ کمی واقع ہوئی ہے۔ موٹروے پولیس کی اہم ترجیحات میں روڈ سیفٹی اور ٹریفک قوانین کی موثر آگاہی ہے تاکہ قومی شاہراؤں کو ٹریفک حادثات سے پاک کر کے قیمتی جان و مال کی ضیاع کو روکا جا سکے ۔ اگرہم روڈ سیفٹی اور ٹریفک قوانین پر عمل کرنا شروع کردیں تو ایسے مہلک حادثات سے بچا جا سکتا ہے۔ اس قبل ڈی آئی جی (آپریشنز) نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس عباس احسن نے خطبہ استقبالیہ پیش کیا۔علماء کانفرنس میں علماء کرام نے ٹریفک قوانین اور روڈ سیفٹی آگاہی کے سلسلے میں موٹروے پولیس کو بھر پور تعاون کا یقین دلایا۔اس موقع پر مولانا غلام مصطفی رضوی ، پیرعبداشکورنقشبندی ، مولانا زاہد حسین کاظمی اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔ علماء کانفرنس کے اختتام پر انسپکٹر جنرل ڈاکٹر سید کلیم امام نے مقررین کا شکریہ ادا کیا اور یادگاری شیلڈ پیش کی۔